admin

عید کی خوشیوں میں دوسروں کو بھی شامل کیجئے : ڈاکٹر تہمینہ وزیر گل

کرسمس ہو کہ ایسٹر، عید ہو کہ ہولی دیوالی بہت خوبصورت دن ہوتے ہے ۔۔۔بچوں ،بڑوں،بزرگوں سبھی لیے ۔۔۔کہیں چمکتے لباس،کہیں دمکتے چہرے ،کہیں بچوں کی کلکاریاں ،کہیں عورتوں کی تیاریاں ۔۔کہیں چوڑیوں کی کھنک،کہیں،مہندی کی مہک،ٹک ٹک کرتی ہیل کی آوازیں ،کہیں ساڑی کے پلو سنبھالتی پھپھیاں، کہیں،میک اپ سنبھالتی کنگن گھوماتی خالائیں ،دوپڑے…

مزید پڑھیں

تحفہ اور گھر: جاویدیاد

تحفہ: زیادہ تر گھروں میں ایسا ہے کہ صبح ہوتے ہی اخبار ہمارے سامنے ہوتا ہے گو اب ٹی وی، ریڈیو، کیبل اور دوسرے ذرائع ابلاغ ہمارے سامنے دنیا بھر کی خبریں اخبار آنے سے پہلے ہی لے آتے ہیں، لیکن اخبار کی اہمیت اب بھی ویسی ہے جو پہلے روز سے تھی،جو ں ہی…

مزید پڑھیں

کیسے کیسے خیال آتے ہیں؟ : پروفیسر وکٹوریہ پیٹرک امرت

 مَیں نے عالم ِ خواب میں دیکھا کہ شاعر مشرق علامہ اقبالؒ بادشاہی مسجد کی سیٹرھیوں پر سرجھکائے کسی گہری سوچ میں غرق بیٹھے ہیں۔ مَیں مؤدبانہ عرض کی،”یا حضرت! کس سوچ میں گم ہیں؟قوم پر کڑی آزمائش کا وقت ہے اکابرین اور مدبرین ایک گھتی سلجھانے کے لئے بلند و بانگ دعوے کر رہے…

مزید پڑھیں

ماہنامہ “نیاتادیب” لاہور/ملتان کے زیرِ اہتمام ایسٹر مشاعرہ

لاہور(نیاتادیب) 27مارچ 2024 شام 7بجے، ڈینی ایل ہاؤس، 12/3 ماڈرن کالونی کوٹ لکھپت لاہورمیں ماہنامہ “نیاتادیب” لاہور/ملتان کے زیرِ اہتمام ایسٹر مشاعرہ منعقد ہوا جس صدارت معروف شاعر جناب ڈاکٹر عادلؔ امین نے کی، مہمانِ خصوصی معروف افسانہ نگار جناب آصف عمران اور مہمانِ اعزاز جناب ڈاکٹر طارق جاوید طارق تھے جبکہ نظامت کے فرائض…

مزید پڑھیں

اپنے دشمن آپ ۔فادرسہیل پیٹرک سہیلہ

کبھی آپ نے سوچا ہے کہ آپ بھی بہت بامقصد اور پُر مسرت ذندگی گزار سکتے ہیں۔ اپنی ذندگی کا ہر فیصلہ ، پورے اعتماد کے ساتھ خود کر سکتے ہیں۔ پھر آخر ہم سے تاخیر کیوں ہو جاتی ہے ؟ کیوں ہم اپنی ذندگی کا چناو ، اپنے روزمرہ کاموں کا انتخاب کرنے میں…

مزید پڑھیں

لوگ کہتے تھے عید کارڈ اسے: سجاد جہانیہ

شرقاً غرباً لیٹی ہوئی ایک سڑک ہے جو شہر کے قدیمی بوہڑ دروازے کی قدموں سے پھوٹتی ہے اور چھاﺅنی کی طرف نکل جاتی ہے۔ اسی سڑک پر ایک بچے کھچے مگر تیزی سے اجڑتے سینما گھر کے سامنے وہ وسیع عمارت ہے. ایک مستطیل جو اپنے طول میں سڑک کے ساتھ ساتھ چلی گئی…

مزید پڑھیں

افسانہ ۔ رزقِ خاک : آسناتھ کنول

زندگی بڑے آرام و آسائش سے اپنی ڈگر پر رواں دواں تھی۔اتنے عیش و آرام تھے۔کسی بھی بات کی فکر نہ تھی۔وہ ان حسین پہاڑوں کی بیٹی تھی۔حدِنگاہ تک پھیلے ہوئے جنگلات اور یہ دیدہ زیب نظارے اس کی تڑپتی پھڑکتی روح کو بڑا سکون دیتے تھے۔کتنی ہی باتیں تنہائی میں وہ ان سرمئی پہاڑوں…

مزید پڑھیں